Urdu Poetry

Urdu Poetry ҅҅҉рОєtRy,рєдсє ,lОvє ҉҅҅҅҅ ●--~√V√V''^---●▐►• @+[547650245247121:o]
(238)

12/12/2019

بے حسی کا سورج طلوع ہوا ہے
انسانیت کا قتلِ عام ہوا ہے

اس قوم کو شمشیر کی حاجت نہیں رہتیہو جس کے جوانوں کی خودی صورت فولادناچیز جہان مہ و پرویں ترے آگےوہ عالم مجبور ہے ، تو عا...
12/11/2019

اس قوم کو شمشیر کی حاجت نہیں رہتی
ہو جس کے جوانوں کی خودی صورت فولاد

ناچیز جہان مہ و پرویں ترے آگے
وہ عالم مجبور ہے ، تو عالم آزاد

موجوں کی تپش کیا ہے ، فقط ذوق طلب ہے
پنہاں جو صدف میں ہے ، وہ دولت ہے خدا داد

شاہیں کبھی پرواز سے تھک کر نہیں گرتا
پر دم ہے اگر تو تو نہیں خطرۂ افتاد

علامہ محمّد اقبال

12/11/2019
فارس : ’’تم نے ایک دو دفعہ کے علاوہ مجھے کبھی نہیں ٹوکا نماز نہ پڑھنے پر۔ ویسے یہ تمہارا فرض تھا کہ تم مجھے ٹوکتیں۔مجھے ...
12/11/2019

فارس : ’’تم نے ایک دو دفعہ کے علاوہ مجھے کبھی نہیں ٹوکا نماز نہ پڑھنے پر۔ ویسے یہ تمہارا فرض تھا کہ تم مجھے ٹوکتیں۔مجھے احساس دلاتیں۔‘‘
زمر : ’’فارس !سات سال کے ‘دس اور بارہ سال کے بچے کو ٹوکا جاتا ہے ‘ مارا جاتا ہے ‘ گھر سے نکالا جاتا ہے ‘ نماز نہ پڑھنے پر....بالغ مسلمان کو نہیں ٹوکا جاتا ۔ اس کے سامنے نماز پڑھنا ہی اس کو نماز کی نصیحت کرنا ہے۔ پتہ ہے کیا فارس ‘ ہمارے گھر میں ایک ایسا شخص ضرور ہوتا ہے جو نماز نہیں پڑھتا یا وہ غیبت کرتا ہے ‘ یا کسی ایسی برائی میں ملوث ہوتا ہے جس سے ہم اسے نکالنا چاہتے ہیں مگر ہزار جتن کر کے ‘ نصیحت کر کے ‘ لیکچر دے کر ‘ سمجھا کر ‘ غصہ کر کے اس کے لئے دعا کر کے بھی ہم اس کو نکال نہیں پاتے اس اندھیرے سے۔ اس کی اصلاح نہیں کر پاتے ۔ اور یہی سوچتے رہتے ہیں کہ اس کا کیا بنے گا ۔یہ تو جہنم میں جائے گا۔‘‘
فارس : ’’تو پھر ہم اسے کیسے اس برائی سے نکالیں؟‘‘
زمر : ’’ہم یہ جان لیں کہ وہ اپنی نہیں’’ہماری ‘‘ آزمائش ہے۔ اس کی تو بخشش بڑے آرام سے ہو جائے گی کیونکہ ا س کا دل تو کچھ عرصے کے لئے الله نے نیکی کی طرف سے بند کر رکھا ہے ہمیں آزمانے کے لئے کہ ہم کیا کرتے ہیں۔ ا س نے تو نہیں پڑھ رکھی تفسیر ‘ ا س نے تو ہماری طرح حدیث کی کتابیں گھول کر نہیں پی ہوئیں‘ ہر وقت اس کی بخشش کی فکر نہیں کرنی چاہیے ہمیں۔ ہم کیا کرتے ہیں‘ یہ اہم ہے۔ تمہیں پتہ ہے ہمیں ایسے موقعوں پر کیا کرنا چاہیے؟ جو خوبی اس میں دیکھنا چاہتے ہیں اس کو اپنے اندر ڈال لیں اور ایکسیلینس کے لیول پہ اسے اپنا لیں۔ وہ نماز نہیں پڑھتا تو ہم اپنی نماز کو خوبصورت بناتے چلے جائیں۔ اس کودکھانے کے لئے نہیں‘ بلکہ الله کو دکھانے کے لئے کہ الله یہ ہے وہ پرفیکشن کا لیول جو میں اس کی عبادت میں بھی دیکھنا چاہتی ہوں۔ اس کو ایک لفظ بھی کہنے کی ضرورت نہیں ہے ہمیں۔ جس پہ الفاظ اثر نہ کریں‘ اسے عمل سے نصیحت کرنی چاہیے ۔"

نمرہ احمد کے ناول "نمل" سے.

Photos from Urdu Poetry's post
12/10/2019

Photos from Urdu Poetry's post

ایک جوڑا ریسٹورنٹ سے نِصف شب گھر پُہنچا تو گیس کی بُو پھیلی ھوئی محسوس کی، میاں باورچی خانے میں گیا جہاں زیادہ بُو کا اح...
12/09/2019

ایک جوڑا ریسٹورنٹ سے نِصف شب گھر پُہنچا تو گیس کی بُو پھیلی ھوئی محسوس کی، میاں باورچی خانے میں گیا جہاں زیادہ بُو کا احساس ھوا، لاشعوری طور پر اُس کا ھاتھ لائٹ کے بٹن پر گیا جِسے دباتے ھی ایک زوردار دھماکہ ھو گیا ، وہ شخص موقع پر ھی جاں بحق ھو گیا جبکہ اسپتال میں زیرِ علاج اُسکی بیوی کی حالت اِنتہائی تشویشناک بتائی جاتی ھے ، گھریلو فرنیچر اور دیگر اشیاء دو سو میٹر تک بکھری پڑی تھیں جو یہ بتا رھی تھیں کہ دھماکہ کسی بم جیسا طاقتور تھا..

اِس المناک حادثے سے ھمیں یہ سبق مِلتا ھے کہ..
جب گیس کی بُو کا احساس ھو تو فورا لیکن آرام سے کھڑکیاں دروازے کھول دیں ، ماچس کی تِیلی یا لائٹر مطلق نہ جلائیں اور نہ ایگزاسٹ فین چلائیں ، ریفریجریٹر کا دروازہ بھی تب تک ھرگز نہ کھولیں جب تک گیس کی بُو غائب نہ ھو جائے..

از راہِ کرم اِن ھدایات کو صرف اپنے تک محدود نہ رکھیں بلکہ دوسروں کو بھی آگاہ کریں ، اللہ تعالیٰ آپکو اِسکا اجر عطاء کرے گا ، اِن شاء اللہ.

صرف آپ ہی پڑھ کر آگے نہ بڑھ جائیں بلکہ اوروں کو بھی شریک کریں, یہ صدقہ جاریہ ہوگا۔

(کاپیڈ)

جس دیس سے ماؤں بہنوں کواغیار اٹھا ۔۔۔۔۔۔۔ کر لے جائیںجس دیس سے قاتل غنڈوں کواشراف چھڑا ۔۔۔۔۔۔ کر لے جائیںجس دیس کی کورٹ ...
11/22/2019

جس دیس سے ماؤں بہنوں کو
اغیار اٹھا ۔۔۔۔۔۔۔ کر لے جائیں

جس دیس سے قاتل غنڈوں کو
اشراف چھڑا ۔۔۔۔۔۔ کر لے جائیں

جس دیس کی کورٹ کچہری میں
انصاف ٹکوں پر ۔۔۔۔۔۔۔۔ بکتا ہو

جس دیس کا منشی قاضی بھی
مجرم سے پوچھ کے ۔۔۔ لکھتا ہو

جس دیس کے چپے چپے پر
پولیس کے ناکے ۔۔۔۔۔ ہوتے ہوں

جس دیس کے مندر ، مسجد میں
ہر روز دھماکے ۔۔۔۔۔ ہوتے ہوں

جس دیس میں جاں کے رکھوالے
خود جانیں لیں ۔۔ معصوموں کی

جس دیس میں حاکم ظالم ہو
سسکی نہ سنیں ۔۔۔ مجبوروں کی

جس دیس کے عادل بہرے ہوں
آہیں نہ سنیں ۔۔۔۔۔ معصوموں کی

جس دیس کےگلیوں کوچوں میں
ہر سمت فحاشی ۔۔۔۔۔ پھیلی ہو

جس دیس میں بنتِ حوّا کی
چادر بھی داغ سے ۔۔۔۔۔ میلی ہو

جس دیس میں آٹے چینی کا
بحران فلک تک ۔۔۔۔ جا پہنچے

جس دیس میں بجلی پانی کا
فقدان حلق تک ۔۔۔۔۔ آ پہنچے

جس دیس کے ہر چوراہے پر
دو چار بھکاری ۔۔۔۔۔۔ پھرتے ہوں

جس دیس میں روز جہازوں سے
امدادی تھیلے ۔۔۔۔۔۔ گرتے ہوں

جس دیس میں غربت ماؤں سے
بچے نیلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کراتی ہو

جس دیس میں دولت شرفا سے
نا جائز کام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کراتی ہو

جس دیس کے عہدیداروں سے
عہدے نہ سنبھالے ۔۔۔۔ جاتے ہوں

جس دیس کے سادہ لوح انساں
وعدوں پہ ہی ٹالے جاتے ہوں

اس دیس کے ہر اک لیڈر پر
سوال اٹھانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واجب ہے

اس دیس کے ہر اک حاکم کو
سولی پہ چڑھانا ۔۔۔۔۔ واجب ہے

11/17/2019
11/13/2019
10/16/2019
11/18/2018
11/10/2018
Photos from Urdu Poetry's post
12/11/2017

Photos from Urdu Poetry's post

beshak................
10/14/2017

beshak................

10/11/2017
10/04/2017

حکمت کلام

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جو شخص اللہ پر اور آخرت کے دن پر ایمان رکهتا هو اس کو چاہئے کہ بولے تو بهلی بات بولے ورنہ چپ رہے -

لابرویر (jean La Bruyere) ایک فرانسیسی مصنف ہے - وه 1645 میں پیدا هوا اور 1696 میں اس کی وفات هوئی - اس نے یہی بات ان لفظوں میں کہی کہ یہ بڑی بدبختی کی بات ہے کہ آدمی کے اندر نہ اتنی سمجهہ هو کہ وه اچها بولے ، اور نہ اتنی قوت فیصلہ هو کہ وه چپ رہے :
It is a great misery not to have enough wit to speak well , nor enough judgement to keep quiet.

بولنے کی صلاحیت ناقابل بیان حد تک ایک عظیم صلاحیت ہے جو اللہ تعالی نے انسان کو عطا فرمائی ہے - بولنے کی صلاحیت کو اگر درست طور پر استعمال کیا جائے تو وه نعمت ہے ، اور اگر بولنے کی صلاحیت کا بے جا استعمال کیا جائے تو وه اتنی ہی بڑی مصیبت بن جاتی ہے -

بولنے کی صلاحیت کا صحیح استعمال یہ ہے کہ آدمی بولنے سے پہلے سوچے - خود کہنے سے پہلے وه دوسروں کی سنے - جو لفظ بهی وه منهہ سے نکالے یہ سوچ کر نکالے کہ اس کو اپنے بولے هوئے ایک ایک لفظ کا جواب اللہ تعالی کے یہاں دینا ہے ، جس کے پاس بولنے کے لیے هو ، اس کے باوجود وه چپ رہنے کو پسند کرے - جو ذمہ داری کے احساس کے تحت بولے نہ کہ شوق گفتگو کے جذبہ کے تحت -

اس کے برعکس بولنے کی صلاحیت کا غلط استعمال یہ ہے کہ آدمی سوچے بغیر بولے - اس کو صرف سنانے کا شوق هو ، سننے سے اسے کوئی دلچسپی نہ هو - معاملات کو گہرائی کے ساته سمجهے بغیر وه معاملات پر تقریر کرنے کے لیے کهڑا هو جائے - اس کا بولنا خود نمائی کے لیے هو نہ کہ اظہار حقیقت کے لیے -

بولنا سب سے بڑا ثواب ہے ، اور بولنا سب سے بڑا گناه بهی - جو آدمی اس حقیقت کو جان لے ، اس کا بولنا بهی بامعنی هو گا اور اس کا چپ رہنا بهی بامعنی -

مطالعہ حدیث
مولانا وحیدالدین خان

10/01/2017

انا کی قید سے باہر نکل کر آپ دوسروں کو محسوس کرسکتے ہیں۔ انتخاب

"ٹوپیاں"۔۔۔"ہندو مسلم فساد کے دنوں میں ہم لوگ جب باہر کسی کام سے نکلتے تھے تو اپنے ساتھ دو ٹوپیاں رکھتے تھے۔ ایک ہندو کی...
09/15/2017

"
ٹوپیاں"۔۔۔
"ہندو مسلم فساد کے دنوں میں ہم لوگ جب باہر کسی کام سے نکلتے تھے تو اپنے ساتھ دو ٹوپیاں رکھتے تھے۔ ایک ہندو کیپ ، دوسری رومی ٹوپی۔ جب مسلمانوں کے محلے سے گزرتے تو رومی ٹوپی پہن لیتے تھے اور جب ہندووں کے محلے میں جاتے تھے تو ہندو کیپ لگا لیتے تھے۔۔۔۔۔ اس فساد میں ہم لوگوں نے گاندھی کیپ بھی خریدی۔ یہ ہم جیب میں رکھ لیتے تھے، جہاں کہیں ضرورت محسوس ہوتی تھی جھٹ سے پہن لیتے تھے ۔۔۔ پہلے مذہب سینوں میں ہوتا تھا اب ٹوپیوں میں ہوتا ہے۔ سیاست بھی اب ٹوپیوں میں چلی آئی ہے۔۔۔۔
۔ زندہ باد ٹوپیاں"

سعادت حسن منٹو (منٹو کے مضامین)

09/06/2017
08/09/2017
😂😂😂😂😂😂😂😂
08/09/2017

😂😂😂😂😂😂😂😂

کڑوا سچ........
08/08/2017

کڑوا سچ........

ایک بار جناب بہلول کسی نخلستان میں تشریف رکھتے تھے - ایک تاجر کا وھاں سے گذر ھوا --- وہ آپ کے پاس آیا اور سلام کر کے مود...
07/28/2017

ایک بار جناب بہلول کسی نخلستان میں تشریف رکھتے تھے - ایک تاجر کا وھاں سے گذر ھوا --- وہ آپ کے پاس آیا اور سلام کر کے مودب سامنے بیٹھ گیا اور انتہائی ادب سے گذارش کی.. " حضور ! تجارت کی کونسی ایسی جنس خریدوں جس میں بہت نفع ھو.. "
جناب بہلول نےفرمایا.. " کالا کپڑا لے لو.. "
تاجر نے شکریہ ادا کیا اور الٹے قدموں چلتا واپس چلاگیا.. جا کر اس نے علاقے میں دستیاب تمام سیاہ کپڑا خرید لیا..
کچھ دنوں بعد شہر کا بہت بڑا آدمی انتقال کر گیا.. ماتمی لباس کے لئے سارا شہر سیاہ کپڑے کی تلاش میں نکل کھڑا ھوا.. اب کپڑا سارا اس تاجر کے پاس ذخیرہ تھا.. اس نے مونہہ مانگے داموں فروخت کیا اور اتنا نفع کمایا جتنا ساری زندگی نہ کمایا تھا اور بہت ھی امیر کبیر ھو گیا..
کچھ عرصے بعد وہ گھوڑے پر سوار کہیں سے گذرا.. جناب بہلول وھاں تشریف رکھتے تھے.. وہ وہیں گھوڑے پر بیٹھے بولا.. " او دیوانے ! اب کی بار کیا لوں.. ؟"
بہلول نے فرمایا.. " تربوز لے لو.. "
وہ بھاگا بھاگا گیا اور ساری دولت سے پورے ملک سے تربوز خرید لئے.. ایک ہی ہفتے میں سب خراب ہو گئے اور وہ کوڑی کوڑی کو محتاج ہو گیا..
اسی خستہ حالی میں گھومتے پھرتے اس کی ملاقات جناب بہلول سے ھوگئی تو اس نے کہا.. " یہ آپ نے میرے ساتھ کیا کِیا..? "
جناب بہلول نے فرمایا.. " میں نے نہیں ' تیرے لہجوں اور الفاظ نے سب کیا.. جب تونے ادب سے پوچھا تو مالا مال ہوگیا.. اور جب گستاخی کی تو کنگال ہو گیا.. "
اس کو کہتے ہیں...
باادب با نصیب.. بے ادب بے نصیب..!!

07/26/2017
بدی کا موقع ہوتے ہوئے، بدی نہ کرنا بہت بڑی نیکی ہے۔
07/20/2017

بدی کا موقع ہوتے ہوئے،
بدی نہ کرنا بہت بڑی نیکی ہے۔

Timeline Photos
07/12/2017

Timeline Photos

Timeline Photos
07/12/2017

Timeline Photos

Timeline Photos
07/01/2017

Timeline Photos

Timeline Photos
08/25/2016

Timeline Photos

Urdu Poetry's cover photo
08/20/2016

Urdu Poetry's cover photo

13.7
07/13/2016

13.7

Timeline Photos
07/10/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
07/10/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
06/25/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
06/25/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
06/25/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
06/25/2016

Timeline Photos

Timeline Photos
06/25/2016

Timeline Photos

06/20/2016

need active admins jo page p regular basis p posts kr skein anyone ?

06/14/2016

محبت اک سراب ہے
جس کے پیچهے بها گنے
سے یہ اور دور چلی جاتی هے

"عین" عشق دے حرف نے تین یاروتِنے حـــرف نـے گل ســمجھـاون نوںکھلا "عین" دا منہ اے قبر وانگوںجیوندی جان اے عاشـق دی کھاون...
05/04/2016

"عین" عشق دے حرف نے تین یارو
تِنے حـــرف نـے گل ســمجھـاون نوں
کھلا "عین" دا منہ اے قبر وانگوں
جیوندی جان اے عاشـق دی کھاون نوں

دندے "شین" دے آرا مثال سمجھو
نـقـطـے بـھــار نے ســر اٹـھـاون نـوں
تے گھیرے "قاف" اندر جیڑا پھس جاندا
اوہنــوں راہ نئیں لـبــھـدا جـــاون نــوں

Timeline Photos
04/28/2016

Timeline Photos

04/28/2016

Address

9465 Wilshire Blvd, Ste 300
Beverly Hills, CA
90212

Telephone

(334) 897-5674

Alerts

Be the first to know and let us send you an email when Urdu Poetry posts news and promotions. Your email address will not be used for any other purpose, and you can unsubscribe at any time.

Videos

Category

Nearby media companies


Other Newspapers in Beverly Hills

Show All